Sharing one Qurbani for the Prophet

Sharing one Qurbani for the Prophet

Sharing one Qurbānī for the Prophet

Question

If a few people purchase a goat collectively or one of the seven shares of a cow and decide to perform Qurbānī on behalf of the Prophet ﷺ, is this valid?

بسم الله الرحمن الرحیم

Answer

To perform an optional Qurbānī for the Prophet ﷺ is a very noble deed. A person who can afford the price of a goat should purchase a full goat by himself, alternatively, a person can purchase one share from the seven shares of a large animal. If a few people collectively purchase a goat or a share of a large animal for Qurbānī on behalf of the Prophet ﷺ or anyone else, the Qurbānī will be invalid according to the preferred view. This is because Qurbānī is only valid if one person owns the goat or at least one share in a large animal. It is a separate matter that a person can perform an optional Qurbānī on behalf of and for the reward of as many people.

Analysis

There are several scenarios that need to be understood:

Small Animal

If one person performs Qurbānī of a goat on behalf of and for the reward of the Prophet ﷺ, this is valid.

If several people purchase one goat for Qurbānī on behalf of and for the reward of the Prophet ﷺ, there is a difference of opinion of our elders in relation to this, because there is no explicit mention of this issue in the earlier texts.

According to Mufti Maḥmūd Ḥasan Gangohī (d. 1417/1996), Mufti Niẓām al-Dīn al-Aʿẓamī (d. 1420/2000), Mufti ʿAbd al-Raḥim Lājpūrī (d. 1422/2001) and my respected teacher Mufti Muhammad Tahir (b. 1376/1957), the Qurbānī is valid. This is because in effect the Qurbānī is on behalf of one person, the Prophet ﷺ. However, this is questionable because although the reward is for the Prophet ﷺ, the animal and the meat after the sacrifice belong to the owner(s). The jurists have clearly mentioned that in such optional Qurbānīs on behalf of the deceased, the person(s) performing the Qurbānī own the animal and the meat. Accordingly, they can eat from it should they wish to do so. Donating its reward to another person does not mean it is not their Qurbānī or that they do not own it. In addition, an optional Qurbānī can be performed on behalf of and for the reward of more than one person. In fact, it is reported that the Prophet ﷺ performed an optional Qurbānī on behalf of the whole Ummah. This issue of perorming an optional Qurbānī on behalf of many people should not be confused with a few people performing one Qurbānī on behalf of the Prophet ﷺ. Both are separate issues. The Prophet ﷺ owned the animal alone and he sacrificed it for the Ummah, this is permissible.

It is for this reason that several scholars including Mufti Muḥammad Shafīʿ ʿUthmānī (d. 1396/1976), Mawlānā Yūsuf Ludyānwī (d. 1421/2000), Mufti Saʿīd Pālanpūrī (b. 1362/1942), Mufti Muḥammad Taqi Usmani (b. 1362/1943), Mufti Aḥmad Khānpūrī (b. 1365/1946) and my respected father Mufti Shabbir Ahmad (b. 1376/1957) are of the view that the Qurbānī is not valid. This is the preferred view. Accordingly, if a few people perform Qurbānī in this manner, the Qurbānī will not be valid and its reward will not be attained, unless if Allah wills. The meat will be distributed among the owners and if thereafter the meat is distributed among the poor on behalf of the Prophet ﷺ, this will be a valid form of charity.

Therefore, every attempt must be made to purchase goats individually. If this cannot be afforded, then each person can acquire a share from the seven shares of one animal. If this is not possible, then a person can donate the money to the poor on behalf of the Prophet ﷺ. This is also an act of reward.

Some people adopt a ḥīlah by making one person the owner of the animal. In this scenario, the Qurbānī will be valid. However, the doer of the Qurbānī will be the one person and he will own the meat. It is not distant from the mercy of Allah Almighty that he rewards all the people, however, it is better to avoid this ḥīlah.

Large Animal

If one person purchases one of the seven shares from a large animal on behalf of and for the reward of the Prophet ﷺ, this is valid, so long as the other shares of his and/or others are also for Qurbānī or any other act of reward such as ʿAqīqah.

If several people purchase one share from a large animal for Qurbānī on behalf of the Prophet ﷺ, there is a difference of opinion of our elders in relation to this as outlined above. The preferred view is that it is invalid. This also appears to be the view of Mufti Rashīd Aḥmad Ludyānwī (d. 1422/2002) because according to him, it is not possible for the same person to make an intention of his wājib Qurbānī and optional Qurbānī in the same animal.

The final issue worth noting here is that if several people collectively purchase one of the seven shares, whilst the other six shares are wājib Qurbānīs, will their wājib Qurbānīs be valid considering the Qurbānī of the collective seventh share is invalid? There are two scenarios here:

First, if the people purchasing the seventh share are different from the six people, the Qurbānī of all the people will be void.

Second, if the six people who purchased the six wājib Qurbānī shares are the same people who collectively purchased the seventh share, the Qurbānī of the seventh share will be void. However, there appears to be a difference of opinion regarding the wājib Qurbānī of the six people. Mufti Muḥammad Shafīʿ ʿUthmānī (d. 1396/1976) is of the view that the Qurbānī of the entire animal is invalid similar to the first scenario. However, Mufti Muḥammad Taqi Usmani (b. 1362/1943) has discussed in detail that in this scenario, the wājib Qurbānīs of the six people will be valid. This is the stronger view, one that is also shared by Mufti Rashīd Aḥmad Ludyānwī (d. 1422/2002) based on what was mentioned above. Therefore, in this scenario, the six people are not required to repeat the Qurbānī.

Important note: Charity organisations who take Qurbānī orders of shares of large animals individually must ensure that each share is owned by and funded by one person. One share being invalid can invalidate the Qurbānī of the full animal as outlined in the first of the two scenarios.

عن عائشة أن رسول الله صلى الله عليه وسلم أمر بكبش أقرن يطأ في سواد، ويبرك في سواد، وينظر في سواد، فأتي به ليضحي به، فقال لها: يا عائشة، هلمي المدية ثم قال: اشحذيها بحجر، ففعلت: ثم أخذها، وأخذ الكبش فأضجعه، ثم ذبحه، ثم قال: بسم الله اللهم تقبل من محمد وآل محمد ومن أمة محمد، ثم ضحى به، رواه مسلم (١٩٦٧)۔

وعن أبي سلمة عن عائشة أو عن أبي هريرة أن رسول الله صلى الله عليه وسلم كان إذا أراد أن يضحي، اشترى كبشين عظيمين سمينين أقرنين أملحين موجوءين، فذبح أحدهما عن أمته لمن شهد لله بالتوحيد وشهد له بالبلاغ، وذبح الآخر عن محمد وعن آل محمد صلى الله عليه وسلم، رواه ابن ماجه (٣١٢٢)، وحسنه ابن الملقن في البدر المنير (٩/٢٩٩). وراجع نصب الراية (٣/١٥١) وفتح الباري (١٠/١٠) والأجوبة المرضية للسخاوي (٢/٧٩٨)۔

وعن حنش قال: رأيت عليا يضحي بكبشين فقلت له: ما هذا؟ فقال: إن رسول الله صلى الله عليه وسلم أوصاني أن أضحي عنه فأنا أضحي عنه، رواه أبو داود (٢٧٩٠) والترمذي (٤/٨٤) وصححه الحاكم (٧٥٥٦) وأقره الذهبي، وتعقبهما الأرنؤوط في حاشية المسند (٢/٢٠٦). قال الترمذي: هذا حديث غريب، لا نعرفه إلا من حديث شريك، وقد رخص بعض أهل العلم أن يضحى عن الميت، ولم ير بعضهم أن يضحى عنه. وقال عبد الله بن المبارك: أحب إلي أن يتصدق عنه ولا يضحى عنه، وإن ضحى فلا يأكل منها شيئا ويتصدق بها كلها، انتهى. وقال البيهقي (١٩١٨٨): تفرد به شريك بن عبد الله بإسناده، وهو إن ثبت يدل على جواز التضحية عمن خرج من دار الدنيا من المسلمين، انتهى. فكأنه أشار إلى ضعفه۔

وقال الكاساني في البدائع (٥/٧٢): الميت يجوز أن يتقرب عنه، انتهى. وقال المرغيناني في الهداية (٤/٣٦٠): القربة قد تقع عن الميت كالتصدق، انتهى۔

أما الصورة المسئولة فلم أرها مصرحا، والظاهر عدم صحة الأضحية، لأن الشاة لا تقبل الاشتراك، والبقرة لا تجزئ إلا عن سبع. قال السمرقندي في تحفة الفقهاء (٣/٨٥): ولا تجوز الشاة عن أكثر من الواحد وإن كانت عظيمة قيمتها قيمة شاتين، لأن القربة إراقة الدم وذلك لا يتفاوت، انتهى۔

وقد تعارض كلام مشايخنا بالهند في الصورة المسئولة. فذهب جماعة إلى عدم الصحة. قال الشيخ محمد يوسف اللديانوي في فتاويه (٥/٤٤٣): س: بالفرض چند آدمیوں مثلاً: ۶-۸ نے مل کر ایک بکرا خریدا، جس میں سب برابر کے شریک ہیں، اَیام النحر میں سب نے بالاتفاق اس بکرے کو منجانب حضور صلی اللہ علیہ وسلم قربان کیا، تو یہ قربانی صحیح اور دُرست ہوئی یا نہیں؟ج: یہ دُرست نہیں ہوئی، البتہ اگر کوئی ایک شخص پورا حصہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی جانب سے قربانی کرے تو صحیح ہوگا، کیونکہ یہ نفلی قربانی برائے ایصالِ ثواب نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم ہے، اصل قربانی تو قربانی کرنے والے کی طرف سے ہے اور ظاہر ہے کہ قربانی کا ایک حصہ ایک ہی آدمی کی جانب سے ہوسکتا ہے، جبکہ مذکورہ صورت ایک حصہ کئی آدمیوں کی جانب سے ہے۔

وهكذا قال شيخنا المفتي أحمد الخانفوري في فتاويه (٣/٩٤): یہ یاد رہے کہ تمام بیٹے مجموعی طور پر ایک حصہ یا جانور خرید کر باپ کی طرف سے نہیں کرسکتے، ہر ایک یا کوئی ایک انفرادی طور پر کرسکتا ہے۔

وقال المفتي محمد شفيع العثماني في جواب الاستفتاء التالي: سوال۳: یہ ہے کہ چھ آدمی مل کر ایک بیل قربانی کے لئے خریدتے ہیں ، اب چھ آدمی چھ حصہ کو از طرف خود اور ساتواں حصہ کو چھ آدمی مل کر حضور ﷺ کے لئے قربانی دیتے ہیں، اب یہ ساتواں حصہ قربانی ہوگی یا نہ، اور نہ ہونے کی صورت مپر باقی چھ حصۂ قربانی میں فتور آئیگا یا نہیں۔ جواب ۳: ساتویں حصہ میں کئی آدمیوں کی شرکت کی وجہ سے یہ قربانی نا جائز ہوگئی۔ كذا في فتاوى عثمانيه (٤/١١٠)، وبسط فيه شيخنا محمد تقي العثماني بسطا وافيا فراجعه ولا بد۔

قال (٤/١١٣): چھ آدمی مشترک طور پر گائے خریدیں اور ہر ایک شخص نے ایک ایک حصہ مکمل طور پر رکھا اور باقی ایک حصہ میں وہی چھ آدمی مل کر اپنے بجائے حضور اکرم ﷺ کی طرف سے قربانی کرنا چاہیں تو اس صورت کے بارے میں کوئی صریح جزئیہ تو کتب فقہ میں تلاش کے باوجود نہیں مل سکا، البتہ قواعد کا مقتضاء یہ ہے کہ ان کی اصل قربانی درست ہو جائے گی ، لیکن ایک حصہ میں آنحضرت ﷺ کی طرف سے قربانی کرنے کی جو نیت ہے وہ درست نہیں ہوگی ، یعنی ہر ایک کی طرف سے، الخ۔اس کی دلیل یہ ہے کہ اس مسئلے میں علماء کا اختلاف ہے کہ جو شخص کسی جانور میں ایک حصہ اپنی واجب قربانی کے طور پر کر رہا ہو ، وہ اسی جانور میں دوسرا حصہ نفلی قربانی یا کسی اور جہت کیلئے لے سکتا ہے یا نہیں؟ بعض حضرات مثلا حضرت مولانا مفتی رشید احمد صاحب مد ظلہم کی رائے یہ ہے کہ وہ دوسرا حصہ کسی اور جہت کے لئے نہیں لے سکتا، اور اگر وہ ایسی نیت کرے گا تو اس کی نیت کالعدم ہوگی، اور دونوں حصوں سے واجب ہی ادا ہوگا، مثلا کوئی شخص ایک پوری گائے  کی قربانی کرے اور اس میں ایک حصہ اپنی واجب قربانی کا رکھے، اور باقی چھ حصے مختلف لوگوں کے ایصال ثواب کیلئے رکھے تو اس قول کے مطابق باقی چھ حصوں میں ایصال ثواب کی نیت معتبر نہ ہوگی، بلکہ پوری گائے سے واجب قربانی ہی ادا ہوگی۔لیکن دوسرے علماء کا کہنا ہے کہ واجب قربانی کے ساتھ ایک شخص ایک ہی جانور میں متعدد حصے متعدد جہات کے لئے رکھ سکتا ہے۔

ان دونوں اقوال کے مطابق صورت مسئولہ میں واجب قربانی ادا ہوگی، اور ایک حصہ میں ایصال ثواب کی نیت معتبر نہ ہوگی۔ پہلے قول کے مطابق تو ظاہر ہے کہ جب ایک شخص ایک جانور میں متعدد جہات کی نیت نہیں کرسکتا تو صورت مسئولہ میں آنحضرت ﷺ کی طرف سے قربانی کی جو نیت کی گئی وہ معتبر نہ ہوئی، اور پورے جانور سے واجب قربانی ہی ادا ہوئی۔ البتہ دوسرے قول پر اشکال ہوسکتا ہے کہ جب ایک شخص ایک ہی جانور میں متعدد جہات  کے لئے حصہ لے سکتا ہے تو صورت مسئولہ میں چھٹے حصے کے اندر تمام افراد کی نیت معتبر قرار پائی اور چونکہ ایک حصہ میں چھ افراد شریک ہوئے جو خلاف مشروع ہے، لہذا یہ چھٹا حصہ لحم بن گیا اور جب ایک حصہ لحم بن گیا تو کسی بھی حصہ کی قربانی درست نہ ہوئی۔ لیکن غور کرنے سے معلوم ہوتا ہے کہ اس قول کے مطابق بھی مذکورہ چھ افراد کی اصل واجب قربانی ادا ہوجائیگی۔ اس کی دلیل دو مقدمہ پر موقوف ہے:۔

پہلا مقدمہ یہ ہے کہ جب کوئی شخص کوئی قربانی کسی دوسرے شخص کی طرف سے اس کے امر کے بغیر کرتا ہے تو درحقیقت وہ قربانی ذبح کرنے والے کی طرف سے ہوتی ہے، البتہ اس کا ثواب اس شخص کو پہونچتا ہے جس کی طرف سے قربانی کرنے کی اس نے نیت کی۔

قال العلامة الشامي تحت قول الدر المختار “وعن ميت”: أي لو ضحى عن ميت وارثه بأمره ألزمه بالتصدق بها وعدم الأكل منها، وإن تبرع بها عنه له الأكل، لأنه يقع على ملك الذابح والثواب للميت (رد المحتار ٥/٢١٣)۔

دوسرا مقدمہ یہ ہے کہ اگر کوئی شخص کسی جانور میں ساتویں حصے کی کوئی کسر (مثلا نصف السبع یا ثلث السبع یا سدس السبع) تنہا لے تو وہ شرعا قربانی نہیں ہوتی بلکہ لحم بن جاتی ہے، البتہ جس شخص نے کسی جانور میں کوئی سبع کامل لیا ہو تو اس کے ساتھ اگر وہ سبع کی کسر بھی لے لے تو وہ کسر بھی اصل کے تابع بن کر قربانی شمار ہوتی ہے، اس کی وجہ سے جانور لحم نہیں بنتا، یہ بات سوال ۲ کے جواب میں مفصل گزر چکی ہے۔تاہم اطمینان کیلئے مندرجہ ذیل عبارتیں ملاحظہ ہوں:۔

ولا شك في جواز بدنة أو بقرة عن أقل من سبعة بأن اشترك اثنان أو ثلاثة أو أربعة أو خمسة أو ستة في بدنة أو بقرة، لأنه لما جاز السبع فالزيادة أولى، وسواء اتفقت الأنصباء في القدر أو اختلفت، بأن يكون لأحدهم النصف وللآخر الثلث ولآخر السدس بعد أن لا ينقص عن السبع (بدائع الصنائع للكاساني ٥/٧١)۔

ولو كانت البدنة بين اثنين نصفين تجوز في الأصح، لأنه لما جاز ثلاثة الأسباع جاز نصف السبع تبعا له، كذا في الهداية. وقال في الكفاية تحت قوله “في الأصح”: هذا احتراز عن قول بعض المشايخ، فأنهم قالوا: لا يجوز، لأن كل واحد منهما ثلاثة أسباع ونصف سبع، ونصف السبع لا يجوز في الأضحية، فإذا لم يجز البعض لم يجز الباقي. وقال بعضهم: يجوز، وبه أخذ الفقيه أبو الليث والصدر الشهيد، لأنه لما جاز ثلاثة الأسباع، جاز نصف السبع تبعا، ووجه ذلك أن نصف السبع وإن لم يكن أضحية فهي قربة تبعا للأضحية، كما إذا ضحى شاة فخرج من بطنها جنين حي، فإنه يجب عليه أن يضحيه، وإلا لم تجز تضحيته ابتداء (حاشية الهداية للإمام اللكنوي ٤/٤٤٥، ومثله في العناية ٨/٧١ والهندية ٨/٧١)۔

 ان دو مقدمات کی روشنی میں جب زیر بحث صورت کو دیکھا جاتا ہے تو اس کی حقیقت یہ سامنے آتی ہے کہ مذکورہ چھ آدمیوں نے ایک حصہ میں حضور اکرم ﷺ کی طرف سے قربانی کرنے کی جو نیت کی ہے ، بحکم مقدمہ اولی اس کا حاصل یہ ہے کہ وہ قربانی انہیں کی طرف سے ہوگی، اور آنحضرت ﷺ کو ایصال ثواب ہوگا، اور جب قربانی انہیں کی طرف سے ہوئی تو اگر ان کا کوئی کامل حصہ اس جانور میں نہ ہوتا تو یہ حصہ لحم بن جاتا، کیونکہ کسر کی قربانی مستقلا مشروع نہیں، لیکن چونکہ انہیں چھ آدمیوں کے اسی جانور میں کامل حصے موجود ہیں، اس لئے چھٹے حصے کی کسر دوسرے مقدمے کے مطابق کامل حصے کے تابع ہو کر درست ہو جائے گی، اس کی مثال بالکل ایسی ہوگی جیسے یہ چھ آدمی جانور میں ایک ایک کامل حصہ لینے کے بعد ساتویں حصہ کے بارے میں یہ طے کرتے کہ یہ ہم سب کی طرف سے مشترک ہوگا، جس کا حاصل یہ ہوگا کہ اس ساتویں حصہ کا ایک ایک سدس ہر شخص کا ہوگا، ظاہر ہے کہ اس صورت میں ساتویں حصہ کی کسر کی وجہ سے بحکم مقدمہ ثانیہ ان کی قربانی باطل نہ ہوئی، بلکہ یہ کسر بھی اصل کے تابع ہو کر درست ہوجاتی ہے۔بعینہ اسی طرح اس صورت مسئولہ میں بھی یہ اصل قربانی درست ہوجائے گی، کیونکہ آنحضرت ﷺ کی طرف سے قربانی کرنے کا مطلب بحکم مقدمہ اولی اپنی طرف سے قربانی کرنا ہے، وقد مر جوازہ۔

اب صرف یہ بات رہ جاتی ہے کہ انہوں نے آنحضرت ﷺ کے لئے جو ایصال ثواب کیا ہے ، آیا یہ ایصال ثواب درست ہوگا یا نہیں؟ اول تو اس مسئلے کا تعلق آخرت کے ثواب سے ہے، جس کے بارے میں نص کی غیر موجودگی میں کوئی یقینی حکم لگانا مشکل ہے، لیکن قواعد سے یہ ایصال ثواب درست معلوم نہیں ہوتا، اس لئے کہ ساتویں حصہ میں جو کسر واقع ہوئی وہ قربت تو ہے لیکن قربت مستقلہ نہیں، بلکہ واجب قربانی کے تابع ہے، لہذا صرف اس قربت تابعہ کا ایصال ثواب ایسا ہے جیسے کوئی شخص یہ کہے کہ میں نے اپنی فرض نماز میں جو مستحبات انجام دئے ہیں صرف ان مستحبات کا ثواب فلاں کو پہونچاتا ہوں، اور ایسے ایصال ثواب کی کوئی نظیر شریعت میں نظر سے نہیں گزری۔بالخصوص یہاں قربت تابعہ بھی ایسی ہے کہ اگر مہدی لہ خود اس کو انجام دیتا تو کسی کی بھی قربانی درست نہ ہوتی،  اس لئے اس کا ایصال ثواب اور زیادہ مخدوش ہے۔ اس کے علاوہ صرف ایک قربت ِ ضمنیہ کا ثواب آنحضرت ﷺ کی خدمت میں ہدیہ کرنا ، جبکہ قربت اصلیہ اپنی طرف سے ہو ذوقا موہِم سوءِ ادب  معلوم ہوتا ہے، لہذا اس سے احتراز کرنا چاہئے، اور جب آنحضرت ﷺ کی طرف سے کوئی قربانی کرنے کا ارادہ ہو تو مکمل حصہ کی قربانی کرنی چاہئے۔

مفتی اعظم پاکستان حضرت مولانا مفتی محمد شفیع صاحب قدس اللہ سرہ کا جو فتوی سوال کے ساتھ منسلک کیا گیا ہے وہ بظاہر مذکورہ بالا تحریر کے خلاف معلوم ہوتا ہے ، لیکن اس فتوی میں کافی اجمال ہے ، اور اس میں جو یہ فرمایا گیا ہے کہ ’’ساتویں حصہ میں کئی آدمیوں کی شرکت کی وجہ سے یہ قربانی نا جائز ہوگی‘‘ اس کا ایک مطلب یہ بھی ہوسکتا ہے کہ صرف ساتواں حصہ میں ایصال ثواب کی نیت سے قربانی باطل ہوگی، نہ کہ اصل قربانی ، اس صورت میں اس فتوی کا حاصل بھی وہی ہوگا جو اوپر ذکر کیا گیا۔  دوسرے اگر اس فتوی کی مراد یہی ہو کہ پوری قربانی باطل ہوگی تو یہ احتمال بھی ہے کہ حضرت کے پیش نظر وہ صورت ہو جب کہ ساتویں حصہ میں دوسرے کئی آدمیوں کی شرکت ہوگئی ہو ، نہ کہ ان آدمیوں کی جن کے کامل حصے اس جانور میں موجود ہیں۔ اور پیچھے عرض کیا جاچکا ہے کہ اس صورت میں پوری قربانی باطل ہوجاتی ہے۔ اور اگر بالفرض فتوی کی مراد صورت مسئولہ میں پوری قربانی کا باطل ہوجانا ہے تو حضرت نے اس مسئلہ کے دلائل سے تعرض نہیں فرمایا ، اور اگر حضرت قدس سرہ کی خدمت میں وہ امور پیش کئے جاتے ، جن کا اوپر ذکر کیا گیا ، توشاید ان کی رائے بھی قربانی کے جواز کی ہوتی۔ ان احتمالات کی موجودگی میں یہ محتمل فتوی مذکورہ بالا دلائل کو یکسر نظر انداز کرنے کے لئے کافی معلوم نہیں ہوتا۔ اسی فتوی کےمختلف پہلؤوں پر غور کرنے کی وجہ سے جواب میں تاخیر ہوئی، کیونکہ حضرت قدس سرہ کا محتمل فتوی بھی ہم جیسوں کی مفصل تحقیق پر فوقیت رکھتا ہے۔ لیکن بار بار اصول وقواعد پر نظر کرنے اور کتب فقہ کی مراجعت کے بعد جو رائے فیما بیننا وبین اللہ قائم ہوئی، اہل علم کے سامنے اس کا اظہار بھی ضروری ہوا، اس بناء پر یہ تحریر لکھی گئی، تاہم چونکہ یہ تحریر قواعد کی بنیاد پر لکھی گئی ہے اور حضرت کے فتوی کا ظاہر اس کے خلاف ہے، اس لئے یہ عین ممکن ہے کہ یہ ناچیز کے سوءِ فہم پر مبنی ہو، اس لئے اس بارے میں دوسرے علماء اہل فتوی سے بھی مراجعت کر لی جائے،  هذا ما منح لي في هذا الباب، والله أعلم، انتهى كلام المفتي محمد تقي العثماني۔

قال مقيده عفا الله عنه: كتبت في جواب استفتاء حول موضوع جمع الأضحية والعقيقة في بقرة: مال المفتي رشيد أحمد اللديانوي في أحسن الفتاوى (٧/٥٤٥) إلى عدم صحة تعدد النيات من رجل واحد، فلا يجوز لرجل أن ينوي الأضحية والعقيقة معا، ولا أن ينوي الأضحية الواجبة والنافلة معا. وفيه نظر، لأنه شرط لم يذكره أحد وينافي القياس، لأن أساس جواز الشركة هو نية التقرب، ولا فرق بين كونها من رجل واحد أو أشخاص مختلفة. وقوله هذا ناقشه المفتي محمود حسن الجنجوهي في فتاويه (٢٦/٣٢٣) وجزم بجوازه، وراجع فيه (٢٦/٣٣٤)، كما ناقشه المفتي نظام الدين في نظام الفتاوى (٢/٣٣٤). وفي كفاية المفتي (١٢/١٥٨) للمفتي كفاية الله الدهلوي تصريح الجواز، ولو ذبح بعد موت الولد، انتهى ما كتبته، وليس هذا محل التفصيل۔

وحاصل رأي المفتي محمد شفيع العثماني ونجله الكريم العلام محمد تقي العثماني وكذا المفتي رشيد أحمد اللديانوي أن الاشتراك في شاة أو سُبع بقر لا تحصل به الأضحية في الصورة المسئولة۔

وذهب جماعة إلى الصحة، منهم شيخنا المفتي الصوفي محمد طاهر الوادي. قال المفتي محمود حسن الجنجوهي في فتاوى محموديه (٢٦/٣١٠): سوال:اگر چند شخص مل کر ساتواں حصہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کاکریں توکرنا درست ہے یانہیں،یاایک ہی شخص اس حصہ کی قیمت اداکرے تب درست ہے ؟الجواب حامداومصلیا: ایک شخص قیمت اداکردے تب بھی درست ہے ،سب شرکاء مل کر کریں تب بھی درست ہے۔

وقال المفتي محمود حسن الجنجوهي (٢٦/٣١١): سوال:- قربانی کے جانور میں کتنے حصہ کرسکتے ہیں، قربانی کے جانور میں آپ ﷺ  کاحصہ رکھناکیساہے؟واجب ہے یاسنت ہے؟ اورا س کا طریقہ کیا ہے ؟ مثلاً جیسے کہ چھ آدمیوں نے مل کر ایک گائے خریدی، اس میں ہرایک نے اپنا ایک ایک حصہ پہلے متعین کرلیا اب رہا ایک حصہ توان چھ ساتھیوں کی جانب سے آنحضور ﷺ کا حصہ مشترکہ ہے ، توکیا اس طرح ایک حصہ میں سب کاشریک ہوناجائز ہے ؟ دوسری مثال جیسے کہ دو،تین ،چار،آد میوں نے ملکر ایک بکرا خریدا اوراس کی قربانی کرتے وقت سب نے یہ نیت کی کہ یہ قربانی سب نے ملکر آنحضو رﷺ کے نام ِ مبارک پرکی ہے ، توکیااس طرح صرف ایک بکرے، یا بھیڑ میں دو ، تین یاچار یاچھ آد می شریک ہوسکتے ہیں، آپ نے اس سے قبل مندرجہ ذیل جواب تحریر فرمایا ہے وہ یہ ہے :۔

(الجواب دارالعلوم سابقہ) قربانی کے بڑے جانور گائے ، اونٹ میں سات   آد می شریک ہوسکتے ہیں ،اوراس سے زائد کی اجازت نہیں ہے ، حضرت نبی کریم ﷺکی طرف سے حصہ کرنا مستحب اوربڑے اجروثواب کی بات ہے ، اوربہتر طریقہ یہ ہے کہ ایک آد می مستقلاً حصہ اس مقصد کے واسطے لے ، لیکن اگرایسا نہ ہوسکے ،تو چھ آد می مل کرمشترکہ طورپر ایک حصہ لیں، یہ بھی درست ہے ۔ (د)  ایک بکرا صر ف ایک آد می کی طرف سے قربانی میں ذبح کیا جاسکتاہے ، جبکہ اس سے واجب اداکرنا مقصود ہو، اگرکئی آد می مل کر ایک بکرا قربانی کریں، اور حضورﷺ کو اس کا ثواب پہنچادیں تب بھی درست ہے ۔آپ حضرات کا یہ جواب بہشتی زیور کی عبارت سے متضاد معلوم ہوتاہے ،بہشتی زیور کی عبارت یہ ہے : (۱)  گائے ، بھینس، اونٹ میں اگرسات آد می شریک ہوکر قربانی کریں ،توبھی درست ہے ، لیکن شرط یہ ہے کہ کسی کاحصہ ساتویں حصہ سے کم نہ ہو اور سب کی نیت قربانی کرنے کی یاعقیقہ کی ہو، صرف گوشت کھانے کی نیت نہ ہو، اگرکسی کا حصہ ساتویں حصہ سے کم ہو گا، توکسی کی قربانی درست نہ ہوگی، نہ اس کی جس کا پوراحصہ ہے ، اورنہ اس کی درست ہوگی جس کا حصہ ساتویں حصہ سے کم ہے ۔       اگر گائے میں سات آد میوں سے کم لوگ شریک ہوں جیسا کہ پانچ آد می شریک ہوئے ، یا چھ آد می شریک ہوئے ، اورکسی کا حصہ ساتویں حصہ سے کم نہیں ہے ، تب بھی سب کی قربانی درست ہے ، اگرآٹھ آدمیوں نے شرکت کی تو کسی کی بھی قربانی صحیح نہیں ہوئی،  ولو لأحدهم أقل من سبع لم يحزئ عن أحد التنویر، ج۵، ص۳۰۶، بہشتی زیور حصہ سوم ، قربانی کا بیان۔ان دونوں مسئلوں سے پتہ چلتاہے ، کہ قربانی میں کسی کا بھی حصہ ساتویں حصہ سے کم ہوگا توکسی کی بھی قربانی جائز نہیں، اوراس میں آنحضو رﷺاورغیر کے حصہ کاواجب اورتطوع کسی کی تفریق بھی نہیں ہے ، لہٰذا واضح فرماویں کہ ان دونوں میں اورآپ کے دیئے ہوئے جواب میں تطبیق ہوسکتی ہے یانہیں ؟

الجواب حامداًومصلیا: یہاں کے جواب او ربہشتی زیور کے مسئلہ میں کوئی تضاد نہیں، اتنی بات ہے کہ بہشتی زیور کے مسئلہ میں واجب اداکرنے اورثواب پہنچانے کا کوئی ذکر نہیں ، یہاں کے جواب میں اس کی تفصیل کردی گئی ہے ۔حدیث پاک میں ہے کہ حضرت رسول اقدس ﷺنے دو جانوروں کی قربانی کی ، ایک کی اپنی طرف سے اورایک کی تمام امت کی طرف سے ، مقصود ثواب پہنچانا ہی تھا، واجب اداکرنا مقصود نہیں تھا،ورنہ ایک جانور کے ذریعہ سے تمام امت کا واجب کیسے ادا ہوجائے گا، اورجانور بھی چھوٹا جس کے ذریعہ صرف ایک کاو اجب اداہوسکتاہے ،جس میں شرکت کی کوئی گنجائش ہی نہیں ، چہ جائیکہ ساتویں حصہ کاحساب لگایاجائے ۔جس بڑے جانورمیں چھ آ د می شریک ہیں، وہاں کسی کاحصہ ساتویں حصہ سے کم نہیں سب کا زائد ہے ، پھرساتویں حصہ کو سب نے ملکر حضرت نبی اکرم ﷺکی طرف سے ایصال ثواب کے طورپر کردیا ،تب بھی کسی کاحصہ ساتویں حصہ سے کم نہیں ہوا، بلکہ چھ آد میوں کا ایک ایک حصہ پورا پورا ہوا،ایک حصہ میں سب شریک رہے ، اورایک حصہ سے واجب اداکرنا مقصود نہیں،بلکہ ثواب پہنچانا مقصود ہے ، توشرعاً اس میں کچھ حرج نہیں ہے۔

قال مقيده عفا الله عنه: فيه نظر ظاهر، لأن رسول الله صلى الله عليه وسلم ضحى وأهدى ثوابه إلى الأمة، وهو صلى الله عليه وسلم هو المضحي وحده، لم يشاركه فيه أحد، وأنما أهدى ثوابه إلى الأمة. ويجوز إهداء ثواب الأضحية إلى أكثر من واحد، وهو المذكور في رجوع الشيخ أشرف علي التهانوي في إمداد الفتاوى (٣/٥٧٣) لأنه أفتى أولا بأنه لا يجوز التبرع بالأضحية إلا عن ميت واحد، فاحفظ، وهذا نص كلامه، أنقله إتماما للفائدة ولدفع الشبهة الآتية في كلام المفتي نظام الدين:۔

سوال :   اگر فوت شدہ عزیزوں یا اہل بیت یا خاص رسول اللہ صلی اﷲ علیہ وسلم کی طرف سے قربانی کی جاوے تو اس کا کیا طریقہ ہے، آیا مثل دیگر شرکاء ہر ایک شخص کی طرف سے ایک ایک حصہ ہی میں چند کو شریک کردے، فقط؟الجواب:  ایک ہی میں سب کو ثواب بخش سکتے ہیں ۔ فقط تاریخ بالا (تتمہ خامسہ ۷۵)۔

 میں نے گذشتہ سال زبانی فتویٰ دیا تھا کہ جس طرح اپنی طرف سے قربانی کرنے میں ایک حصہ دو شخصوں کی طر ف سے جائز نہیں ، اسی طرح غیر کی طرف سے تبرعًا نفل قربانی کرنے میں خواہ زندہ کی طرف سے یا میّت کی طرف سے، ایک حصہ دو شخص کی طرف سے جائز نہیں ، مگر روایات سے اس کے خلاف ثابت ہوا اس لئے میں اس سے رجوع کرکے اب فتویٰ دیتا ہوں ، کہ جو قربانی دوسرے کی طرف سے تبرعًا  کی جاوے چونکہ وہ ملک ذابح کی ہوتی ہے، اور صرف اس دوسرے کو ثواب پہنچتا ہے، اس لئے ایک حصہ کئی کی طرف سے بھی ہوسکتا ہے، جیسا کہ مسلم میں ہے کہ اپنی طرف سے ایک حصہ قربانی کرکے متعدد کو ثواب پہنچانا جائز ہے ، پس یہ بھی ویسا ہی ہے۔

والروايات هذه: فرع: من ضحى عن الميت يصنع كما يصنع في أضحية نفسه من التصدق والأكل والأجر للميت والملك للذابح. قال الصدر: والمختار أنه إن بأمر الميت لا يأكل منها وإلا يأكلو بزازية، وسيذكره في النظم، رد المحتار (ج ٥، ص ٣١٨). قوله (وعن ميت) أي لو ضحى عن ميت وارثه بأمره ألزمه بالتصدق بها وعدم الأكل منها، وإن تبرع بها عنه له الأكل، لأنه يقع على ملك الذابح والثواب للميت، ولهذا لو كان على الذابح واحدة سقطت عنه أضحيته كما في الأجناس. قال الشرنبلالي: لكن في سقوط الأضحية عنه تأمل اهـ. أقول: صرح في فتح القدير في الحج عن الغير بلا أمر أنه يقع عن الفاعل فيسقط به الفرض عنه وللآخر الثواب فراجعه، رد المحتار (ج٥، ص ٣٢٨). وفي الدر المختار: وإن مات أحد السبعة المشتركين في البدنة وقال الورثة: إذبحوا عنه وعنكم، صح عن الكل استحسانا لقصد القربة من الكل. وفي رد المحتار: هذا وجه الاستحسان. قال في البدائع: لأن الموت لا يمنع التقرب عن الميت بدليل أنه يجوز أن يتصدق عنه ويحج عنه، وقد صح أن رسول الله صلى الله عليه وسلم ضحى بكبشين أحدهما عن نفسه والآخر عمن لم يذبح من أمته. وإن كان منهم من قد مات قبل أن يذبح (ص ٣١٨). قلت: وقد دل الحديث على جواز التضحية عن الحي تبرعا، وعلى جواز صحة الواحدة عن الكثيرين، انتهى كلام الشيخ التهانوي، وتأمل في آخر ما قال، فهو كالنص في عدم الجواز في الاشتراك، انتهى كلام الشيخ أشرف علي التهانوي۔

وقال المفتي عبد الرحيم اللاجفوري في فتاويه (١٠/٥٧): سوال : چھ آدمیوں  نے مل کر قربانی کے بڑے جانور میں  اپنا اپنا واجب حصہ رکھا اور ساتویں  حصہ میں  سب نے شریک ہو کر آنحضرتﷺکے لئے نفل قربانی کی نیت کر لی تو یہ درست ہے یا نہیں ؟ واجب قربانی پر تو برا اثر نہیں پڑتا؟ یاد رہے کہ ساتواں  حصہ ایک شخص کی طرف سے نہیں  ہے بلکہ ایک حصہ میں  چھ شریک ہیں  ۔ لہذا کتاب کے حوالہ سے جواب دیا جائے ۔الجواب:  إن مات أحد السبعة المشتركين في البدنة وقال الورثة: اذبحوا عنه وعنكم، صح عن الكل استحسانا لقصد القربة من الكل، ولو ذبحوها بلا إذن الورثة لم يجزهم (درمختار مع الشامی ج۵ ص ۲۸۴ کتاب الا ضحیۃ)روایت مذکورہ فقہيہ سے استحساناً جائز معلوم ہوتا ہے کیونکہ جب ساتواں  حصہ دار فوت ہوگیا تو اس کا حصہ اس کے ورثاء کی طرف منتقل ہوگیا اور اس حصہ کے ورثا مالک بن گئے اور انہوں  نے اس ساتویں  حصہ کے مالک ہونے کی حیثیت سے قربانی کی اجازت دے دی تو اس کی قربانی درست ہوگئی ، اسی طرح صورت مسئولہ میں  چھ ساتھیوں  نے ساتواں  حصہ خرید کر حضور ﷺکے لئے کردیا تو درست ہونا چاہئے ۔ دوسرے علماء سے بھی دریافت کرلیا جائے۔ فقط واﷲ اعلم بالصواب۔

وقال المفتي نظام الدين في منتخبات نظام الفتاوى (٢/٣٤٥):  سوال: غیر واجب قربانی میں حضور ﷺ کے ایصال ثواب کے لئے دو چار آدمی مل کر مشترکہ قربانی کرنے کو دار العلوم کی جانب سے درست ہونے کا فتوی ۱۳۸۸ھ؁ میں موصول ہوا تھا، تو اس فتوی کو پمفلٹ کی شکل میں شائع کر کے پورے برطانیہ میں تقسیم کیا تھا، جس سے الحمد للہ کم و بیش آج تک سیکڑوں قربانی ہوچکیں۔ لیکن امسال ۱۳۹۱ھ؁ میں ماہ فروری ۱۹۷۱ء؁ میں گجراتی ماہنامہ التبلیغ میں جامعہ ڈابھیل سے اسی قسم کے فتوی کا جواب اس کے برعکس شائع ہوا ہے جس کے سوال وجواب حسب ذیل ہیں:۔

سوال: ہمارے یہاں برطانیہ میں دو تین آدمی مل کر (مشترکہ) حضور ﷺ کے نام پر ایک بکرے کی قربانی کرتے ہیں، یہ صحیح ودرست ہے یا نہیں؟ الجواب وباللہ التوفیق: ایک بکرے کی قربانی ایک ہی آدمی کرسکتا ہے۔ اس میں دو یا تین حصہ دار بن کر بکرے کی قربانی کریں گے تو قربانی صحیح ادا کی ہوئی نہیں سمجھی جائیگی، جس کی وجہ سے قربانی کا ثواب بھی نہیں ملے گا۔حضور ﷺ کے لئے قربانی کرنا یا ایصال ثواب کرنا بہت ہی بہتر اور کار ثواب ہے۔ ہاں، اگر استطاعت اور گنجائش ہو تو ضرور کرنا چاہئے، بڑے جانور میں سات حصے ہوسکتے ہیں، ایسے جانور میں سے ایک ایک حصہ کی قربانی کر سکتے ہیں، فقط۔ (عالمگیری، شامی)۔ جامعہ ڈابھیل سورت ۔ گجرات، فروری ۱۹۷۱ء۔

دار العلوم دیوبند اور  جامعہ ڈابھیل کے جوابات میں صحیح اور غیر صحیح جیسے بڑے فرق ہونے کی وجہ سے لوگوں میں ایک قسم کی پریشانی اور بے چینی پھیلی ہوئی ہے۔ دار العلوم کے ایک فتوی کی  ایک فوٹو کاپی اس خط کے ساتھ ہمراہ روانہ کی ہے اور حضرت تھانوی نے بھی امداد الفتاوی میں دار العلوم کے مانند جواز کا فتوی دیا ہے ، حوالہ حسب ذیل ہے : مبوب امداد الفتاوی جلد سوم، ادارہ اشرف العلوم کراچی، طبع اول شوال ۱۳۷۳ء؁ ، کتاب الذبائح والاضحیہ ص ۴۹۵۔ دار العلوم اور حضرت تھانوی کے حوالے کے بعد مزید تحقیقات کی ضرورت ہی نہیں تھی، مگر جامعہ ڈابھیل کا فتوی گجراتی ماہنامہ رسائل میں شائع ہو کر ملک اور بیرون ملک میں پھیل گیا ہے۔اس وجہ سے مزید استصواب اور تسکین کے لئے دوبارہ وہی سوال حاضر خدمت ہے۔امید کہ مزید روشنی ڈال کر شکریہ کا موقع عنایت فرمائیں گے۔

الجواب وباللہ التوفیق: ۱۳۸۸ھ؁ میں دار العلوم دیوبند سے حضرت مفتی محمود صاحب کا لکھا ہوا جو فتوی گیا ہے وہ صحیح ہے، اسی طرح حضرت تھانوی نور اللہ مرقدہ نے رجوع کے بعد جو تحریر فرمایا ہے وہ بھی صحیح ہے۔ اور مفتی ڈابھیل نے جو بات لکھی ہے کہ ایک بکرے کی قربانی یا سبع بقرہ  (ساتواں حصہ بقرہ کا) کی قربانی چند آدمیوں کے نام سے نہیں ہوسکتی ) وہ اپنی جگہ پر تو صحیح ہے، لیکن یہ بات اس سوال مذکورہ کا جواب نہیں ہوسکتی۔ اس لئےکہ یہاں تو اس بکرے کی قربانی تنہا اور صرف جناب رسول اللہ ﷺ کے نام سے ہوگی، آپ ﷺ کا تنہا وہ حصہ ہوگا۔ اس میں چند آدمی حصہ دار نہیں ہونگے۔ وہ چند آدمی جنہوں نے بکرا خریدکر  فقط آپ ﷺ کے نام قربانی کی ہے ، وہ خود حصہ دار نہیں ہوئے، بلکہ حصہ دار ہونے کے بجائے دوسرے  کو حصہ دار بنانے والے ہوئے ، اور ان دونوں صورتوں میں بڑا فرق ہے ، یہی فرق نہ سمجھنے سے مغالطہ ہوگیا ہے۔ چند آدمیوں کا ایک بکرا یا ساتواں حصہ بقرہ (سبع بقرہ) خرید کر ، مالک بن کر پھر کسی ایک کے نام سے قربانی کرادینا یا بذریعہ وراثت اس کا مالک ہو کر کسی ایک کے نام اس کی قربانی کرادینا ایک ہی چیز ہے، اور اسکے جواز کی تصریح موجود ہے۔كما في الدر على هامش الشامي (٥/٢٨٤): وإن مات أحد السبعة المشتركين في البدنة وقال الورثة: اذبحوا عنه وعنكم، صح عن الكل استحسانا لقصد القربة من الكل، وهكذا في العالمكيرية (٤/١٧٨): وإذا اشترى سبعة بقرة ليضحوا بها فمات أحد السبعة وقالت الورثة وهم كبار: اذبحوا عنه وعنكم، جاز استحسانا، الخ. لہذا آپ حضرات کے یہاں (برطانیہ میں) جو طریقہ رائج ہے وہ بلا شبہ جائز ودرست ہے ، آپ حضرات کسی شک وشبہ میں نہ پڑیں۔ اور یہ بات الگ ہوگی اور بہت اعلی وارفع ہوگی کہ ایک شخص تنہا ایک بکرا خرید کر سرکار دو عالم ﷺ کے نام پر تنہا قربانی کردے۔ فقط واللہ تعالی اعلم، کتبہ الاحقر نظام الدین عفی عنہ، مفتی دار العلوم دیوبند، ۲۲، ۱۱، ۱۳۹۱ھ۔

قال مقيده عفا الله عنه: فيه نظر ظاهر، لأن الملك في الصورة المسئولة يثبت للذابح ولو نوى أجره للميت، والتضحية من مال الميت بأمره أو أمر ورثته تقع عن الميت، وهما مسئلتان مختلفتان. قال قاضي خان في فتاويه (٣/٢٣٨): سبعة نحروا ناقة عن سبعة وأحد الشركاء وارث ميت يذبح عن مورثه، قال محمد رحمه الله تعالى: الستة يأكلون أنصباءهم من اللحم ويتصدق بنصيب الميت ولا يأكله الوارث. قال رضي الله عنه: هذا إذا كان الوارث ضحى من مال الميت بأمر الميت، انتهى. وقال قاضي خان (٣/٢٣٩): ولو ضحى عن ميت من مال نفسه بغير أمر الميت جاز وله أن يتناول منه ولا يلزمه أن يتصدق به لأنها لم تصر ملكا للميت بل الذبح حصل على ملكه، ولهذا لو كان على الذابح أضحية سقطت عنه، وإن ضحى عن ميت من مال الميت بأمر الميت يلزمه التصدق بلحمه ولا يتناول منه لأن الأضحية تقع عن الميت، انتهى. وقال الولوالجي في الفتاوى الولوالجية (٣/٧٤): رجل ضحى عن الميت جاز إجماعا، وهل يلزمه التصدق بالكل؟ تكلموا فيه، والمختار أنه لا يلزمه، لأن الأجر للميت والملك للمضحي، انتهى. وفي النوازل: سئل نصير عن رجل ضحى عن الميت ماذا يصنع به؟ قال: يأكل منه ويصنع به ما يصنع بأضحيته. فقيل له: أيصير عن الميت؟ فقال: الأجر له والملك لهذا، كذا في لسان الحكام (ص ٣٨٩) والنوازل مطبوع فلينظر. وقال ابن عابدين في رد المحتار (٦/٣٢٦): من ضحى عن الميت يصنع كما يصنع في أضحية نفسه من التصدق والأكل والأجر للميت والملك للذابح، انتهى كلام ابن عابدين۔

والمقصود أن الأضحية عن الميت تبرعا لا تتأثر ملكية المضحي، فإذا ثبت الملك للمضحي لا يمكن تعدد المضحين في شاة واحدة. وبه يظهر ما في تعليل المفتي نظام الدين من النظر. ولذا رأيت في نسخة قديمة لنظام الفتاوى في مكتبة الوالد المفتي شبير أحمد البريطاني (ص ١٢٨) أن الوالد علق عليه وهذا نص تعليقه بخطه: فيه نظر، والصحيح أنه لا يجوز، انتهى. وهكذا علق تحت ذكر الشيخ أشرف علي التهانوي وإمداد الفتاوى: فيه (يعني في إمداد الفتاوى) عدم الجواز، فانظر بالنظر الدقيق، انتهى. وقد تقدم الفتوى آنفا۔

فحاصل الكلام في المقام أن الاشتراك في أضحية شاة واحدة لا يجوز، ولو كان تبرعا عن النبي صلى الله عليه وسلم. فللمستطيعين أن يضحوا عن النبي صلى الله عليه وسلم شاة شاة، أو يشتركوا في بقرة واحدة. أما الحيلة وهي أن يملكوا رجلا واحدا ثمن الأضحية، فجائز، لكن الأضحية تقع عن المضحي، وكذا يثبت له الملك لا لغيره. ولا شك أن التضحية أولى من التصدق بثمن الأضحية كما قال في الأصل (٥/٤٠٧): قلت: أرأيت الرجل يضحي أحب إليك أم يتصدق بثمن أضحيته؟ قال: بل يضحي أفضل وأحب إلي، انتهى. لكن ينبغي لغير المستطيع أن يتصدق بما استطاع ويرجو ثوابه عند الله تعالى، وهذا أولى من استخدام الحيلة، والله سبحانه أعلم۔

Allah knows best

Yusuf Shabbir

25 Shawwāl 1440 / 28 June 2019

Approved by: Mufti Shabbir Ahmad